اپوزيشن جماعتوں کا دل سے شکريہ اداکرتا ہوں ،وزیراعظم 120

اپوزيشن جماعتوں کا دل سے شکريہ اداکرتا ہوں ،وزیراعظم

وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ ميری ٹيم سوچتی ہے کہ مہنگائی کو کيسے کم کريں مگر اپوزیشن نے لوگوں کو ٹماٹر  اور پياز کی قيمتیں بھلادیں اسلیے اپوزيشن جماعتوں کا دل سے شکريہ ادا کرتاہوں۔

اسلام آباد میں اوورسیز کنونشن سے خطاب میں وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ انہیں غلط فہمی ہوگئی تھی کہ شايد قوم ان کی کرپشن کو بھول کر  ان کے ساتھ ہے مگر یہ کپتان کے جال میں پھنس گئے ہیں اب صرف عدم اعتماد فيل نہيں ہوگی بلکہ ان کا2023 کا اليکشن بھی گیا۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ  سب لوگوں نےاسلام آباد کارخ کرناشروع کرديا ہے کیونکہ جیسے ہی لوگوں نے دیکھا کہ یہ تینوں ایک ہوگئے تو پچھلے 10دنوں میں پورا منظر بدل گیا۔

انہوں نے کہا کہ ان تینوں نے کھبی سیاست نہیں کی، نوازشريف جنرل جيلانی کی چھتوں کاسريہ لگاتے لگاتے ليڈر بنا جبکہ شہبازشریف ٹوکرے دے دے کر وزیراعلیٰ بنے اور فضل الرحمان پچھلے 30 سال سے دین بیچ رہا ہے۔ عمران خان کا کہنا تھا کہ کپتان کی بندوق کی نشست پريہ تينوں آگئے ہيں۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ کہ زرداری نے بتايا کہ نوازشریف سے کرپٹ کوئی نہیں، نوازشریف نے بتاياکہ زرداری سےکرپٹ کوئی نہيں جبکہ فضل الرحمان کون ليگ نےڈيزل کہنا شروع کيا کیونکہ وہ ڈیزل پرمٹ سے پیسے بناتے تھے۔ انہوں نے مزید کہا کہ قوم سمجھتی ہے کہ اگر ان تینوں نے ملک بچانا ہے تو بہتر ہے عمران خان کیساتھ ڈوب جائے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ یہ اپنا پیسہ بچانے کیلئے ملک کو بیچ دیں گے، ذوالفقاربھٹو سے اختلاف تھا مگر وہ خوددار ليڈرتھا۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ کسی ملک کیخلاف نہیں اُن کی پالیسیوں کیخلاف ہوسکتے ہیں، بھارت کشميرکی 5اگست کی پوزيشن پرواپس جائے مذاکرات کیلئے تیارہیں، دعاگو ہیں بھارت ميں ايسی حکومت آئے جو کمشميريوں کو حقوق دے۔


FaceBook
-->