ترین گروپ اور(ن) لیگ کا عثمان بزدار کو وزارت اعلیٰ کے عہدے سے ہٹانے پراتفاق 91

ترین گروپ اور(ن) لیگ کا عثمان بزدار کو وزارت اعلیٰ کے عہدے سے ہٹانے پراتفاق

 لاہور: حکمران جماعت پی ٹی آئی کے ناراض دھڑے جہانگیر خان ترین گروپ اور مسلم لیگ (ن) کے مابین وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کو ہٹانے پر اتفاق ہوگیا ہے۔ 

لاہور میں ہونے والے اجلاس کے بعد جاری کردہ مشترکہ بیان کے مطابق پنجاب اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر حمزہ شہباز کی قیادت میں مسلم لیگ (ن) کے وفد نے پی ٹی آئی رہنما جہانگیر ترین کی رہائش گاہ پر ترین گروپ سے ملاقات کی۔ خیال رہے کہ جہانگیر ترین اس وقت علاج کی غرض سے لندن میں ہیں۔

 

بیان میں مزید کہا گیا کہ ناراض گروپ کے ارکان  نے پنجاب کی صورتحال پر ’مایوسی کا اظہار‘ کیا اور عثمان بزدار کو وزیراعلیٰ کے عہدے سے ہٹانے کے لیے مسلم لیگ (ن) کے ساتھ اتفاق رائے ہو گیاہے۔

اراکین صوبائی اسمبلی نے وزیراعلیٰ بزدار کی حکومت کی کارکردگی کو بھی تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ کرپشن اور مہنگائی عروج پر ہے۔ مسلم لیگ ن کے وفد میں سردار اویس لغاری، عطا اللہ تارڑ، خواجہ سلمان رفیق اور ذیشان رفیق شامل تھے۔

نئی پیش رفت اس وقت سامنے آئی جب جہانگیر ترین کے گروپ نے اعلان کیا کہ وہ صرف اس صورت میں حکومت کی حمایت کریں گے جب وہ عثمان بزدار کو وزیراعلیٰ پنجاب کے عہدے سے ہٹانے کی شرط مان لے۔

ایم پی اے ملک نعمان احمد لنگڑیال نے صحافیوں کو بتایا کہ گروپ کے تمام اراکین نے جہانگیر ترین کو اپنی جانب سے کوئی بھی فیصلہ کرنے کا مکمل اختیار دیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ میں یہاں یہ بات اجاگر کرنا چاہتا ہوں کہ اگر حکومت مائنس بزدار فارمولے کو قبول کرتی ہے تو گروپ کے تمام اراکین آگے بڑھنے کی حکمت عملی پر متحد ہیں اور گروپ کے تمام ہم خیال اراکین جہانگیر ترین کے فیصلے کو قبول کرنے کے لیے تیار ہیں۔

نعمان احمد لنگڑیال نے اشارہ دیا تھا کہ وہ مختلف سیاسی جماعتوں سے رابطے میں ہیں کیونکہ ایوان میں دو بڑی سیاسی جماعتوں کے بعد اس گروپ کو اکثریت حاصل ہے۔





Source link

sobaan saeed
Author: sobaan saeed

Sobaan saeed is writer||Blogger||works at khabraindaily

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں