Iran new governor slapped by going boy 75

ایران میں نوجوان نے نومنتخب گورنر کو تھپڑ رسید کردیا

تہران: ایرانی صوبے مشرقی آذر بائیجان میں نوجوان نے نو منتخب گورنر کو عوامی اجتماع میں تھپڑ ماردیا

ایرانی خبر رساں ایجنسی فارس کے مطابق یہ واقع اس وقت پیش آیا جب مشرقی آذربائیجان صوبے کے نومنتخب گورنر زین العابدین خرم جنوب مشرقی شہر تبریز کی امام خمینی مسجد میں تقریر کر رہے تھے۔

خبر ایجنسی کی جانب سے جاری ویڈیو میں دیکھا جاسکتا ہے کہ ایک نوجوان بہت اطمینان کے ساتھ چلتا ہو گورنر کے پاس آیا اور انہیں تھپڑ مار دیا۔ تاہم گورنر کے محافظ فرار کی کوشش کرنے والے نوجوان کو پکڑ کر اسٹیج سے نیچے لے گئے۔

رپورٹ کے مطابق اس پروگرام میں آیت اللہ خمینی دفتر کے نمائندگان اور دیگر اعلی عہدے دار بھی موجود تھے۔ گورنر کو تھپڑ مارنے والے نوجوان کی شناخت ایوب علی زادے کے نام سے ہوئی ہےاور اس کا تعلق ملک کی مسلح افواج سے بتایا جارہا ہے۔

سرکاری ٹی وی آئی آر آئی بی سے گفتگو میں گورنر زین العابدین خرم کا کہنا تھا کہ وہ حملہ آور کو ذاتی طور پر نہیں جانتے  تاہم اس نوجوان نے پولیس کو دیے گئے بیان میں کہا ہے کہ کورونا ویکسی نیشن مرکز میں اس کی اہلیہ کو خاتون کے بجائے مرد اسٹاف نے ویکسین لگائی تھی جس پراسے غصہ تھا اور اس حملے کا مقصد کسی طور بھی سیاسی نہیں ہے۔

Saqib Mehmood
Author: Saqib Mehmood

Saqib Mehmood is a writer||Columnist||Blogger ||works at khabraindaily

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں