aizez memon 94

سندھ میں قتل ہونے والے صحافی عزیز میمن کے گھر بلاول کیوں نہیں گئے؟ عارف حمید بھٹی

کیا اس کی ماں نہیں تھی کیا اس کی رگوں میں بہنے والا سرخ رنگ خون نہیں تھا یہ کہنا تھا عارف حمید بھٹی جو کہ ایک سینئر جرنلسٹ ہیں۔ صحافی عزیز میمن نے ٹرین مارچ کو ایکسپوز کیا تھا جنہوں نے بتایا تھا کہ کیسے بندوں کو خرید کر ٹرین میں لایا گیا۔ جس کے بعد انہیں قتل کر دیا گیا

اور آج تک اس کے قاتلوں کو نہیں پکڑا گیا۔ مزید حمید بھٹی کا کہنا تھا کہ یہ لوگ سانحہ ماڈل ٹاؤن کے مظلوموں کے پاس تو نہیں جاتے۔ واضح رہے کہ کے صحافی اسد طور پر حملہ کیا گیا جس میں وہ زخمی ہوئے اور ان کی عیادت کے لیے بھی پی ڈی ایم کے قائدین اور آج بلاول بھٹو تشریف لائے۔ مزید عارف حمید بھٹی کا کہنا تھا کہ جب ارشد شریف کے خلاف جو کہ ایک نہایت سینئیر جنرلسٹ ہیں ان کے خلاف باتیں کی جاتی ہے تو کوئی نہیں بولتا اسی طرح عمران ریاض کے خلاف باتیں کی جاتی ہیں تو اس کے خلاف کوئی نہیں بولتا۔

عارف حمید بھٹی نے ایک بڑا انکشاف کیا ہے کہ وہ کہتے ہیں کہ آنے والے دنوں میں غیر ملکی فنڈنگ کے لیے ملک کے حالات کو خراب کیا جائے۔ میڈیا وار شروع کی جائے گی اور کچھ سیاسی جماعتیں اس میں شامل ہوگئیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ تمام صحافیوں کو اس ملک کی وجہ سے عزت ملی میں ایسے صحافیوں کو بھی جانتا ہوں جن کے پاس موٹرسائیکل بھی نہیں تھی لیکن لیکن آج ان کے پاس اتنی جائیدادیں ہیں کہ ان کو گنا بھی نہیں جاسکتا نواز شریف کے دور میں دس دس صحافیوں کو گولی لگ گئی تھی یہ کبھی ان کے گھر نہیں گئے اور بہت سارے رپورٹر کو نوکریوں سے بے دخل کیا گیا۔ چار چار مہینے تنخواہ نہیں دی گئی۔ مزید انہوں نے کیا کہا آئیے سنتے ہیں۔

وسیم عباس
Author: وسیم عباس

وسیم عباس فری لانسر , جرنلسٹ , وی لاگر , کالم نگار , سوشل میڈیا ایکٹویسٹ ,خبریں ڈیلی کے ساتھ بطور ایڈمن منسلک ہیں انکا ٹویٹر اکاونٹ[email protected] کے ہینڈل سے ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں